• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

وراثت کی ایک صورت

استفتاء

میرے شوہر *** کا کئی سال  پہلےانتقال ہوگیا ہے اب جس مکان میں ہم رہتے ہیں وہ میرے سسر محمد *** کے نام پر ہے اب مجھے اس مکان میں  حصہ ملے گا یا نہیں؟ میرے سسر کی اولاد میں ایک بیٹا اور دو بیٹیاں ہیں، بیٹے یعنی میرے شوہر(***)  کا انتقال ہوگیا ہے جبکہ ***کی دو بیٹیاں اور(والدہ)  میری ساس  اور دو بہنیں حیات ہیں۔ میرے سسر محمد ***کا میرے شوہر سے پہلے انتقال ہوا ہے اور محمد ***کے والدین کا محمد ***سے پہلے انتقال ہوا ہے۔آپ سے شرعی تقسیم کا فتویٰ مطلوب ہے  ۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں  محمد ***مرحوم کی وراثت کے 768 حصے کیے جائیں گے جن میں سے محمد ***کی بیوی کو 152 حصے(19.79فیصد)،محمد ***کی دونوں  بیٹیوں میں سے ہر ایک کو 175 حصے (22.78فیصد فی کس)،محمد ***کی دونوں پوتیوں  میں سے ہر ایک کو 112حصے (14.58فیصد فی کس) اور محمد ***کے بیٹے کی بیوی کو 42 حصے (5.46فیصد) ملیں گے۔

صورت تقسیم درج ذیل ہے:

8×4=32×24=768 محمد ***

بیوی بیٹی بیٹی بیٹا
ثمن عصبہ    
1         7    
1×4         7×4    
4 28    
4×24 7 7 14
96 7×24 7×24  
96 168 168  

 

 

24×2=4824x7=336              احسان علی       147x24=336

بیوی والدہ 2بہنیں 2بیٹیاں
ثمن سدس عصبہ ثلثان
3 4 1 16
3×2 4×2 1×2 16×2
6 8 2 32
6×7 8×7 2×7 32×7
42 56 14 224
42 56 7+7 112+112

الاحیاء(محمد ***)                              بیوی بیٹی……………………….             بیٹی             …………….پوتی  ……………..          پوتی           ………….بہو

152………..175…………………… 175 ……………112………….. 11………….42

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط واللہ تعالی اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved