• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

باپ شریک بھائی کا حصہ

استفتاء

***جو کہ عرصہ دراز سے فوت شدہ ہے، جس کے وارثان ہمشیرہ صاحبہ، بیوی عطر نشاء، بیٹی رابعہ بی بی اور سوتیلا بھائی والد کی طرف سے عرف نتھو ہے،***کی وراثت کی بارہ میں علماء دین کیا فرماتے ہیں کہ کس کس وارث کو کتنی وراثت میں ملے گا؟

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں میت کے کل ترکہ کے 8 حصے کر کے بیٹی کو 4 حصے، بہن کو 3 حصے اور بیوی کو ایک حصہ دیا جائے گا۔ باپ شریک بھائی کو میت کی وراثت سے کچھ نہ ملے گا۔ صورت تقسیم یہ ہے:

8                                                 

بیوی         بیٹی                بہن     باپ شریک بھائی

8/1        2/1              عصبہ              محروم

1           4                 3

و يسقط بنو العلات أيضاً بالأخ لأب و أم و بالأخت لأب و أم إذا صارت عصبة. (سراجي: 28)

… مثاله بنت و أخت لأبوين و أخ أو إخوة لأب فالنصف للبنت و النصف الثاني للأخت و لا شيئ للإخوة لأنها لما صارت عصبة نزلت منزلة الأخ لأبوين. (هندية: 6/ 451) فقط و الله أعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved