• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

بیوی کی عدت کے دوران اس کی بھتیجی سے نکاح کرنے کا حکم

استفتاء

*****نامی ایک شخص نے نجمہ بی بی سے نکاح کیا اور اس سے اس کے 2بچے ہیں۔ غلام رسول نے نجمہ بی بی کو پہلی طلاق 21-1-2کو دوسری طلاق 21-2-20کو اور تیسری طلاق 21-3-27کو دی ہے۔اور اس نے نجمہ بی بی کی بھتیجی سے 21-3-20کو نکاح کیا۔ تو کیا دورانِ عدت اس شخص کا نجمہ بی بی کی بھتیجی کے ساتھ نکاح درست ہوا یا نہیں؟

نوٹ: نجمہ بی بی کی پہلی طلاق  کی تاریخ 21-1-2 کے بعد سے نجمہ بی بی کی بھتیجی کے ساتھ نکاح کی تاریخ 21-3-20تک نجمہ بی بی کی تین ماہواریاں نہیں گذری تھیں۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں اگر واقعتاً نجمہ بی بی کی پہلی طلاق کے بعد بھتیجی کے نکاح تک تین ماہواریاں نہیں گذری تھیں تو نجمہ بی بی کے شوہر کا ان کی بھتیجی کے ساتھ نکاح فاسد ہے جو واجب الفسخ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط واللہ تعالی اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved