• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

مناسخہ

استفتاء

*** جن کی وفات ہوئی تو وارثان میں چار بچے تھے، جن میں سے *** (بیٹی) اور***سگے بہن بھائی اور ***اور *** سگے بھا۴ی تھے۔ بعد ازاں *** بھی وفات پا گیا، جس کی نہ تو بیوی تھی اور نہ ہی کوئی اولاد تھی،ج بکہ بعد میں ***کی بھی وفات ہو گئی، جس کی اولاد تو کوئی نہ تھی، لیکن بیوی ***ہے۔ قرآن و سنت کی روشنی میں ان کا حصہ جو *** کی جائیداد میں سے بنتا ہے اس کی تفصیل بتا دیجیے؟

نوٹ: *** کی وفات کے وقت ان کی دونوں بیویاں (والدہ****اور والدہ  ***) نہ تھیں، اور نہ ہی***صاحب کے والدین میں سے کوئی حیات تھا۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں *** کی وراثت کو 56 حصوں میں تقسیم کر کے 35 حصے سلطان کو، اور 16 حصے*** کو، اور 5 حصے*** کو ملیں گے۔ تقسیم کی صورت یہ ہے:

بیٹا (***)

2

بیٹا (***)

2×2

4

7×2= 14×4= 56                        ***         

بیٹا (***)       بیٹی (***)

2×2             1×2

4×4             2×4

16               8

 

2×2= 4×4= 16                  ***2×2= 4×4= 16 مف

***

علاتی بھائی

 

 

1

*** بہن***بھائی ***

2/1                                     عصبہ

1×2                                          1×2

2                                        2

2×4                                                       1×4

8                                                           4

 

4×5= 20                  ***                       5×4= 20 مف

بیوی***بھائی***بہن ***

4/1                 عصبہ                        محروم

1×5                3×5

5                     15                                                     فقط و اللہ تعالیٰ اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved