• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

بغیر ڈیوٹی دیے تنخواہ لینا

استفتاء

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ *** 2012ء سے اب تک کبھی ملازمت پر گیا نہیں اور نہ آئندہ جانے کا ارادہ ہے، اور تنخواہ مسلسل لے رہا ہے۔ اب پوچھنا یہ ہے کہ اب تک *** جو تنخواہ لے چکا ہے اس کا کیا حکم ہے۔ اگر ناجائز ہے تو اس کا تدارک کیسے ہو؟

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں *** کے لیے ملازمت پر جائے بغیر تنخواہ لینا جائز نہیں۔ *** اب تک جو تنخواہ لے چکا ہے اس کے بارے میں وہ خود بتائے کہ اس کے  ذہن میں اس کے تدارک کی ممکنہ صورتیں کیا کیا ہیں۔ فقط و اللہ تعالیٰ اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved