• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

مناسخہ کی ایک صورت

استفتاء

تنقیح نمبر 1 : *** اور *** کی کوئی اولاد نہیں ہے۔ اور *** اور *** کے والدین ان سے پہلے فوت ہوگئے ہیں۔

تنقیح نمبر 2 :مرنے والوں کی ترتیب یہ ہے کہ سب سے پہلے ***  (1995ء) میں فوت ہوا   ان کے ورثاء یہ ہیں زوجہ(***) ، چھ بھائی (*** ،***،***،*** ،***  ، *** ) اور تین بہنیں (***،***،***)   ہیں ۔اس کے بعد *** کی بہن  *** (1995ء) میں فوت ہوئی ان کے ورثاء یہ ہیں  دو بیٹے (***،***)  اور دو بیٹیاں (*** ،***) ہیں   اور *** کا خاوند  *** سے پہلے ہی فوت ہو چکا تھا۔ اس کے بعد  *** کا بھائی *** (2002ء) میں فوت ہوا  ان کے ورثاء یہ ہیں چار بیٹے (*** ، ***، ***، *** ) اور چار بیٹیاں (*** ،*** ، *** ، *** ) ہیں اور *** کی بیوی  *** سے پہلے ہی فوت ہو چکی تھی۔ اس کے بعد *** کی بیوی ***(2006ء) میں فوت ہوئی ان کے ورثاء یہ ہیں  چھ بھائی (*** ،***، م*** ،*** ، *** ، ***) اور ایک بہن (*** ) ہے اور *** کے والدین *** کی زندگی میں ہی فوت ہوچکے تھے   ۔اس کے بعد *** کی بہن *** (2010ء) میں فوت ہوئی   ان کے ورثاء یہ ہیں ایک بیٹا (*** ) اور ایک بیٹی (*** ) ہے اور *** کا خاوند *** سے پہلے ہی  فوت ہو چکا تھا ۔ اس کے بعد *** کی بہن *** (2013ء) میں فوت ہوئی ان کے ورثاء یہ ہیں زوج (***) ، دو بیٹے ***، *** ) اور تین بیٹیاں (***، *** ،***) ہیں ۔  اس کے بعد *** کا بھائی *** (2014ء) میں فوت ہوا  ان کے ورثاء یہ ہیں زوجہ (***)، تین بیٹے (***، ***، ***) اور دو بیٹیا ں (***،***) ہیں۔ اس کے بعد *** کے بھائی   *** کی بیٹی *** (2017 ء) میں فوت ہوئی ان کے ورثاء یہ ہیں تین بیٹے (م***، ***، *** ) اور دو بیٹیاں(*** ، *** ) ہیں   اور *** کا خاوند *** سے پہلے ہی فوت ہو چکا تھا۔اس کے بعد *** کا بھائی   *** (2018ء) میں فوت ہوا   ان کے ورثاء یہ ہیں تین بیٹے (*** ، *** ، *** *** ) اور تین بیٹیاں (*** ،*** ،***) ہیں اور *** کی بیوی  *** سے پہلے ہی فوت ہو چکی تھی ۔اس کے بعد *** کا بھائی *** (2020ء) میں فوت ہوا ان کے ورثاء یہ ہیں زوجہ (***)  اور تین بیٹے (*** ، *** ، ***) ہیں  جبکہ *** کی کوئی بیٹی نہیں تھی۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ  صورت میں کل ترکہ کے 524160 حصے کریں گے جس میں سے*** کے بھائی   ***،***  اور ***  میں سے ہر ایک کو 52416 حصے(10 فیصد)  ،اور ***  کی بہن  *** کو 26208 حصے(5 فیصد)  ،اور *** کے بیٹے  *** اور ***  میں سے ہر ایک کو 8736 حصے(تقریباً1.666 فیصد)، اور  *** کی بیٹی *** اور ذکیا جبیں میں سے ہر ایک  کو 4368 حصے(تقریباً 0.833فیصد)،  اور *** کے بیٹے  *** ،*** ،*** اور *** میں سے ہر ایک  کو 8736 حصے(تقریباً 1.666فیصد)، اور  *** کی بیٹی *** ،*** اور *** میں سے ہر ایک  کو 4368 حصے(تقریباً  0.833فیصد)، اور*** کے بھائی  *** ، م***، *** ، *** اور *** میں سے ہر ایک  کو 20160 حصے(تقریباً3.846 فیصد)،  اور *** کے بیٹے  ***  کو 17472 حصے(تقریباً 3.333فیصد)، اور  *** کی بیٹی *** کو 8736 حصے(تقریباً 1.666 فیصد)،  اور *** کے خاوند  ***  کو 2520 حصے(تقریباً0.480 فیصد)، اور  *** کے بیٹے *** اور *** میں سے ہر ایک   کو  2160 حصے(تقریباً 0.412 فیصد)، اور ***  کی بیٹی  ***،*** اور ***  میں سے ہر ایک کو 1080 حصے(تقریباً 0.206 فیصد)، اور*** کی بیوی  *** کو 6592 حصے(تقریباً 1.257 فیصد)،  اور *** کے بیٹے   ***، *** اور *** میں سے ہر ایک  کو 11466 حصے(تقریباً 2.187 فیصد)، اور *** کی بیٹی  *** اور *** میں سے ہر ایک  کو 5733 حصے(تقریباً3 1.09 فیصد)،اور*** کے بیٹے*** ،*** اور ***  میں سے ہر ایک کو 1092 حصے(تقریباً8 0.20 فیصد)، اور *** کی بیٹی  *** اور ***  میں سے ہر ایک کو 546 حصے(تقریباً 0.104 فیصد)، اور *** کے بیٹے  مظفر *** ، طارق ***    اور *** *** میں سے ہر ایک   کو 4480 حصے(تقریباً 0.854 فیصد)،  اور  *** کی بیٹی *** ،*** اور *** میں سے ہر ایک  کو 2240 حصے(تقریباً 0.427 فیصد)، اور*** کی بیوی  *** کو 6552 حصے(تقریباً 1.25فیصد)، اور *** کے بیٹے  *** ، *** اور *** میں سے ہر ایک  کو 15288 حصے(تقریباً 2.916 فیصد)  ملیں گے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط واللہ تعالی اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved