• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

مناسخہ

استفتاء

1۔***صاحب 2000ء میں وفات پا گئے۔ وراثت میں ایک عدد رہائشی مکان (جوکہ پچاس مرلہ کے قریپ ہے) چھوڑ گئے۔ ورثاء میں 7 بیٹے اور 2 بیٹیاں تھیں۔ ابھی وراثت تقسیم نہیں ہوئی تھی کہ ساتویں سال میں مرحوم کی بڑی بیٹی بھی حادثے میں فوت ہو گئیں۔

بیٹی کے وارث: خاوند، چار بیٹے اور ایک بیٹی ہیں۔

نوٹ:*** کی بیوی کا انتقال*** کے انتقال سے پہلے ہو چکا ہے۔

تقسیم وراثت شریعت کی رُو سے کیسے ہو گی؟

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں *** کے مکان کو 576 حصوں میں تقسیم کر کے ان میں سے ان کے ہر ایک بیٹے کو 72- 72 حصے، ان کی حیات بیٹی کو 36 حصے ملیں گے۔

اور *** کی فوت ہونے والی بیٹی کے شوہر کو 9 حصے، ان کے ہر ایک بیٹے کو 6- 6 حصے اور ان کی بیٹی کو 3 ملیں گے۔ صورتِ تقسیم یہ ہے:

16×36= 576                              *****  

7 بیٹے                                             حیات بیٹی          بعد میں فوت شدہ بیٹی

14                                               1                           1

36×2+2+2+2+2+2+2               36×1

72+72+72+72+72+72+72       36

 

4×9= 36                            1×36= 36

شوہر                  4 بیٹے                       بیٹی

4/1                           عصبہ

1×9                          3×9

9                              27

9           6+6+6+6                      3

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved