• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

مناسخہ

استفتاء

ہمارے دادا کا انتقال 1993 میں ہوا ۔ان کا ایک مکان تھا ،ان کے دو بیٹے اور چار بیٹیاں تھیں  ،ایک بیٹی کا انتقال دادا کی زندگی میں ہو گیا تھا ۔ایک بیٹے(***کا والد )کا انتقال 2004میں ہوا ،ان کا ایک بیٹا اور تین بیٹیاں ہیں ۔ دوسرے بیٹے کا انتقال 2015 میں ہوا ان کے بیوی بچے نہیں ہیں۔ اب دادا کی  وراثت کیسے تقسیم کریں۔نیز پہلے بیٹے کی بیوی کا انتقال تقسیم سے پہلے ہی ہو چکا تھا۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں دادا کے مکا ن کی کل مالیت کو 315 حصوں میں تقسیم کر کے 65،65 حصے ہر(زندہ) بیٹی کو ،اور 66 حصے ان کے پوتے(***) کو، اور 18،18 حصے دادا کی ہر پوتی(***کی بہنیں)کو ملیں گے۔ صورت تقسیم یہ ہے:

7×5= 35×9= 315           ***کے دادا( 1993ء)           

بیٹا

2×5

10

بیٹا

2

بیٹی                بیٹی                بیٹی

1×5             1×5             1×5

5×9             5×9             5×9

45               45               45

 

5×2= 10×9= 9        پہلا بیٹا (2004ء)                   2×5= 10×9= 90

بیٹا                    بیٹی                بیٹی                بیٹی      بھائی بہنیں

2×2                1×2             1×2             1×2   محروم

4×9                2×9             2×9             2×9

36                            18               18               18

 

3×3=9×10= 90                 دوسرا بیٹا                              10×9= 90

بہن                   بہن               بہن               1 بھتیجا            3 بھتیجیاں

3/2                                          عصبہ              محروم

2×3                                         1×3

6                                              3

2×10              2×10          2×10          3×10

20                            20               20               30

الاحیاء                                                      

بیٹی          بیٹی      بیٹی      پوتا      پوتی      پوتی      پوتی

65                   65     65     66     18     18     18               فقط واللہ اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved