• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

مشروم زکوٰة فارم

استفتاء

منسلکہ فارم مشروم کمپنی کا زکوٰة فارم ہے، جسے کمپنی اپنے ہر اس ملازم سے لازمی فِل کرواتی ہے جو کمپنی سے امداد کا خواہاں ہوتا ہے۔ مشروم کمپنی نے یہ زکوٰة فارم اس لیے بنایا ہے کہ تاکہ ان کی زکوٰة بالکل صحیح ادا ہو، کوئی شبہ نہ رہے۔ مشروم کے زکوٰة فارم کے مطابق دیگر کمپنیاں بھی زکوٰة فارم بنانا چاہتی ہیں، تاکہ ان کی زکوٰة کی ادائیگی میں بھی شبہ نہ رہے۔

بندہ کو اس طرح کے فارم تیار کرنے پر درج ذیل  خلجانات ہیں:

1۔ شریعت نے زکوٰة ادا کرنے کے لیے فقیر کے ظاہری حالات پر مدار رکھا ہے، اور اس کی عزتِ نفس کا خیال رکھا ہے۔

ظاہری حالات پر مدار کرنے کی وجہ ہے کہ ظاہری طور پر اگر کوئی شخص مستحق نظر آ رہا ہو تو اسے زکوٰة دینے سے زکوٰة ادا ہو جاتی ہے، اگرچہ بعد میں وہ شخص مستحق نہ بھی نکلے۔جبکہ فارم لازمی فِل کروانے میں ظاہری حالت کو چھوڑ کر حقیقت حال کا اعتبار کرنا ہے، جو کہ غلو ہے، نیز کمپنیاں جب امداد کے خواہاں ملازمین سے بغیر کسی استثناء کے لازمی فارم فِل کروائیں گی، (جیسا کہ مشروم کرتی ہے) تو ان فقراء کی عزتِ نفس مجروح ہو گی جو باوجود مستحق ہونے کے زکوٰة لینا گوارا نہیں کرتے۔ حالانکہ شریعت نے ان کی عزت نفس کے خیال سے زکوٰة کو ہدیہ کہہ کر دینا جائز کہا ہے۔

2۔ کمپنیوں کا مزاج یہ ہے کہ ہر کام کے لیے نظام بنانے کے بعد اس پر مکمل طور سے عمل کو اصل سمجھتی ہیں، لہذا اگر ان کا کوئی ملازم اپنی محنت اور کام کی وجہ سے مالکان کا قریبی ہو، اور مستحق زکوٰة ہونے کے باوجود اپنی عزتِ نفس کے خیال سے فارم فِل نہ کرے تو مالکان باوجود بہت زیادہ تعلق کے  اس کی کوئی پرواہ نہیں کریں گے، اور اس کی پریشانیوں کی طرف توجہ بھی نہیں کریں گے۔

3۔ فقیر سے یہ تقاضا کرنا کہ وہ اپنے حالات کے درست ہونے کے لیے کسی شخص سے تحقیق کروا کر لائے اور اس کے تاثرات بھی لکھوا کر لائے، مزید غلو ہے۔

حضرتِ والا کی رائے عالی مطلوب ہے۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

آج کل کے دور اور حالات میں بہت بڑی تعداد زکوٰة زکوٰة کے نام سے ہی سہی مالی مدد لینے میں عار نہیں سمجھتی، اور وہ تفتیش کرانے کو بھی تیار ہیں تو اشکال کی کوئی وجہ نہیں رہی۔ کوئی اکا دکا شخص اگر اُسے اس عار ہو تو وہ مالکان سے علیحدگی میں اپنا مسئلہ رکھ سکتا، پھر  خواہ مالک دے یا نہ دے۔ فقط و اللہ تعالیٰ اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved