• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

روزے کی حالت میں سوتے ہوئے زبان سے خون نکلنے کا حکم

استفتاء

میری زبان پر چھوٹے کٹ ہیں جو ٹھیک نہیں ہو رہے اور روزانہ ان میں سے خون نکلتا ہے ،وضو میں تو تسلی کر کے نماز پڑھتا ہوں تھوک پھینک کر چیک کر لیتا ہوں ،لیکن رمضان میں روزہ کی وجہ سے دن لمبا ہوتا ہے زبان کے خشک ہونے کی صورت میں اکثر جب خون کا ذائقہ محسوس ہوتا ہے تو تھوکتا رہتا ہوں تاکہ حلق میں نہ جائے لیکن جب سوکے اٹھوں تو منہ میں تھوک ہوتا ہے جسے تھوکوں تو اس میں خون واضح ہوتا ہے،دل بے چین ہوتا ہے کہ کہیں روزہ تو نہیں ٹوٹ گیا۔برائے مہربانی رہنمائی فرمائیں؟نیز یہ بھی رہنمائی فرما دیں کہ میں روزہ کیسےرکھوں؟

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

مذکورہ صورت میں سونے کی حالت میں اگر خون حلق یا پیٹ میں پہنچ گیا تو اس سے روزہ نہیں ٹوٹے گا۔

رد المحتار(3/422) ميں ہے:

(أو خرج الدم من بين أسنانه ودخل حلقه)يعني ولم يصل إلى جوفه أما إذا وصل فإن غلب الدم أو تساويا فسد وإلا لا،إلا إذا وجد طعمه بزازية واستحسنه المصنف وهو ما عليه الأكثر.

قوله:(يعني ولم يصل إلى جوفه)ظاهر إطلاق المتن أنه لا يفطر وإن كان الدم غالبا على الريق وصححه في الوجيز كما في السراج وقال:ووجهه أنه لا يمكن الاحتراز عنه عادة فصار بمنزلة ما بين أسنانه وما يبقى من أثر المضمضة كذا في إيضاح الصيرفي اهـ….قلت:ومن هذا يعلم حكم من قلع ضرسه في رمضان ودخل الدم إلى جوفه في النهار ولو نائما فيجب عليه القضاء إلا أن يفرق بعدم إمكان التحرز عنه فيكون كالقيء الذي عاد بنفسه.

امدادالاحکام(2/134)میں ہے:

سوال: زید کادماغ یا پھیپھڑا یا مسوڑھوں کے پھول جانے یا دانتوں کے ہلنے کے سبب منہ کے راہ خون آتارہتا ہے، یہاں تک کہ سانس کے ذریعے فردحلق بھی جاگتے سوتے ہوتاہے، (ایسی حالت میں اگر زید روزے رکھے تو اس کاروزہ اداہوگا یانہیں، اگر روزہ اس کا اس سبب سے نہیں ادا ہوتاہے تو بدلے ان روزوں کے زیدکوشرعاً کیا کرناچاہیے؟ بینوابالکتاب توجروابالصواب۔

الجواب: جس شخص کے دانتوں میں سے اکثرخون آتارہتاہو، اور بلااختیار جاگتے ہوئے یا سوتے ہوئے حلق میں بھی داخل ہوجائے اس کاحکم کسی جگہ صریح نہیں ملا مگر علامہ شامی نے اتنالکھا ہے کہ: ومن هذا يعلم حكم من قلع ضرسه في رمضان ودخل الدم إلى جوفه في النهار ولو نائما فيجب عليه القضاء إلا أن يفرق بعدم إمكان التحرز عنه فيكون كالقيء الذي عاد بنفسه فلیراجع، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ اس شخص کے روزہ کو صحیح کہنے کی گنجائش ہے، اوراگر شامی کی عبارت ذیل پر نظر کی جاوے تو اور بھی زیادہ گنجائش معلوم ہوتی ہے، قوله:(يعني ولم يصل إلى جوفه)ظاهر إطلاق المتن أنه لا يفطر وإن كان الدم غالبا على الريق وصححه في الوجيز كما في السراج وقال:ووجهه أنه لا يمكن الاحتراز عنه عادة فصار بمنزلة ما بين أسنانه الخ، پس صاحب وجیز بدون مرض بھی دم خارج من بین الاسنان کو غیر ممکن الاحتراز قرار دے کر موجب فاسد قرار نہیں دیتے، توحالت مذکورہ فی السوال میں تو بدرجہ اولیٰ دخول دم فی الجوف کو غیر مفسد کہیں گے، جس میں احتراز کا عدم امکان مسلم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط واللہ تعالی اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved