• جامعة دارالتقوی لاہور، پاکستان
  • دارالافتاء اوقات : صبح آ ٹھ تا عشاء

زیر استعمال زیور پر زکوٰۃ کا حکم

استفتاء

ساڑھے سات تولے سونے پر زکوة فرض ہے ۔ اس چیز کا تو مجھے علم ہے ۔مگر  مجھے پتہ چلاہے کہ اگر ساڑھے سات تولے اگر پورا سال ملکیت میں ہوتے ہوئے اگر استعمال میں ہو تو اس پر زکوة نہیں لگتی ۔خواہ ایک انگوٹھی یا ایک چوڑی ہی استعمال ہی کیوں نہ ہو ۔مہر بانی فرماکر کے وضاحت فرمادیں ۔ اگر کسی حدیث یا آیت کا حوالہ ساتھ ہو جائے تو مہر بانی ہوگی۔

الجواب :بسم اللہ حامداًومصلیاً

سونا اگر استعمال میں ہو تو پھر بھی اس پر زکوة آتی ہے۔

ابوداؤد شریف (رقم الحديث:  1565)میں ہے:

عن عبد الله بن عمرو: أن امرأة أتت رسول الله  صلى الله عليه وسلم  ومعها ابنة لها، وفي يد

ابنتها مسكتان غليظتان من ذهب، فقال لها: ((أتعطين زكاة هذا؟ )) قالت: لا، قال: ((أيسرك أن يسورك الله بهما يوم القيامة سوارين من نار؟ )) قال: فخلعتهما فألقتهما إلى النبي صلى الله عليه وسلم، وقالت: هما لله ولرسوله.

ترجمہ:حضرت عبداللہ بن عمروبن عاص رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک عورت رسول اللہ  ﷺکے پاس آئی اس ساتھ اس کی لڑکی بھی تھی اور لڑکی کے ہاتھ میں سونے کے دو موٹے موٹے کڑے تھے ۔آپ ﷺ نے اس لڑکی سے پوچھا کہ تم اس کی زکوٰة ادا کرتی ہو ؟اس نے جواب دیا کہ نہیں، آپ ﷺ نے فرمایا کیا تمہیں یہ بات پسند ہے کہ ان کے بدلے اللہ تعالی تمہیں قیامت کے دن آگ کے کڑے پہنائیں۔اس لڑکی نے وہ کڑے اتارے اور نبی ﷺ کے سامنے رکھ دیئے اور کہا یہ اللہ اور اس کے رسول کے لیے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط واللہ تعالی اعلم

Share This:

© Copyright 2024, All Rights Reserved